12/01/2021

Social Media Rules cannot limit constitutional rights, IHC; PTA counsel claims social media rules ‘in line with International Standards’

Islamabad, 18th December 2020: The Islamabad High Court on Friday issued notices to the Pakistan Telecommunication Authority in the writ petition filed by the Pakistan Federal Union of Journalists (PFUJ) against Removal and Blocking of Unlawful Online Content Rules 2020 notified in November 2020. 

The Court also heard a contempt petition filed by the Awami Workers Party against the PTA, and another petition filed by Mr. Ashfaq Jutt against the banning of TIktok. All three petitions were clubbed together for the hearing. 

The Federal Government was represented by the Deputy Attorney General, whilst prominent lawyer Ahmer Bilal Soofi appeared on behalf of the PTA. Both requested the Chief Justice Athar Minallah for more time to submit their arguments. The Deputy Attorney General, Syed Tayyab Shah, also announced that the Federal Government would be represented by the Attorney General himself in the future proceedings. 

Mr. Soofi told the Court that the Rules were made considering the growing use of social media and that he would satisfy the Court later in his arguments that the Rules were indeed, in line with international laws and standards. The Chief Justice then advised PTA’s counsels that there needs to be a meaningful dialogue with PFUJ, Pakistan Bar Council, and other relevant stakeholders regarding the Rules.

Freedom of expression vital

The Judge further remarked that freedom of speech is vital for the economic and overall growth of a society and that the Court in its previous orders has stressed that there shall be no restraint on freedom of the press. He also added that the Rules cannot exist to limit the freedoms and rights provided to citizens under the Constitution. 

The petition filed by PFUJ also details the potential threat to freedom of expression created by these Rules. 

Key questions posed by IHC

The Chief Justice posed five questions to the parties that need to be taken into account regarding the Rules.

  • Who are the relevant stakeholders that need to be involved for consultation on the Rules? 
  • Were all the relevant stakeholders consulted before the Rules were finalised? 
  • Are the Rules in violation of Article 19 and 19 – A? 
  • According to these Social Media Rules, is it prohibited to speak against any state official? 
  • Will such a provision be misused? 

The Court adjourned the case to 25th January 2021. PTA’s legal team is required to submit a written response before that. 

PFUJ’s counsel, Barrister Jahangir Jadoon, speaking to a Court reporter after the hearing, said that they approached the Court after they concluded that the Rules were in fact not in line with Article 19 and 19-A of the Constitution. 

More details on the objections raised against the Rules by PFUF can be found here

سوشل میڈیا سے متعلق پی ٹی اے کے متنازعہ رُولز، ہائیکورٹ کے پانچ قانونی سوالات ، اٹارنی جنرل کا خود پیش ہو کر دلائل دینے کا فیصلہ

اسلام آباد ہائیکورٹ نے سوشل میڈیا سے متعلق پی ٹی کے متنازعہ رُولز کیخلاف پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ (پی ایف یوجے) کی جانب سے دائر درخواست پر بھی پاکستان ٹیلی کمیونیکشن اتھارٹی کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے جمعہ کے روز عوامی ورکرز پارٹی(اے ڈبلیو پی)  اور پی ایف یو جے  کی درخواستوں پر سماعت کی۔ وفاقی حکومت کی جانب سے ڈپٹی اٹارنی جنرل طیب شاہ جبکہ پی ٹی اے کی جانب سے احمر بلال صوفی عدالت کے سامنے پیش ہوئے ۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل سید طیب شاہ نے استدعا کی کہ کچھ مہلت دی جائے ، اٹارنی جنرل پاکستان خود اس معاملے پر دلائل دینا چاہتے ہیں ۔ عدالت نے یہ استدعا منظور کرلی۔

سماعت کے دوران ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ اظہار رائے پر پابندی سے  معاشرے پیچھے رہ جاتے ہیں۔جہاں آزادی اظہار رائے کو دبایا جاتا ہے وہ ممالک اقتصادی لحاظ سے پیچھے چلے جاتے ہیں۔ آزادی اظہار رائے نہائت ضروری ہے،  عدالت پہلے بھی حکم ناموں میں  لکھ چکی ہے کہ پریس فریڈم پر قدغن کا تاثر بھی نہیں ہونا چاہئے۔ آئین میں جن آزادیوں کی شہریوں کو ضمانت دی گئی ہے ان پر رُولز کے ذریعے پابندی نہیں لگائی جا سکتی۔

پی ایف یو جے کے وکیل بیرسٹر جہانگیر جدون کا کہنا تھا کہ آئین کے آرٹیکل 19 اور 19اے کا پی ٹی اے ُرولز کے ساتھ موازنہ کرنے کے بعد ہی عدالت سے رجوع کیا گیا ہے۔

پی ٹی اے کے وکیل احمر بلال صوفی کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیا سے متعلق بین الاقوامی سطح پر ہونے والی قانون سازی اور سوشل میڈیا کے بڑھتے ہوئے استعمال کو مدنظر رکھتے ہوئے رُولز بنانے پڑے، وہ اس معاملے پر عدالت کو مطمئن بھی کریں گے ۔

عدالت نے پی ٹی اے وکیل کو ہدایت کی کہ وہ رُولز پی ایف یو جے ، پاکستان بار کونسل سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کو بھیجیں ، تمام فریقین کی بامعانی مشاورت ضروری ہےعدالت نے تمام فریقین کو پی ٹی اے رُولز دیکھ کر آئندہ سماعت پر دلائل دینے کی ہدایت کی ہے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے پانچ اہم سوالات بھی فریقین سے پوچھ لئے۔

سوشل میڈیا رُولز سے متعلقہ اسٹیک ہولڈرزکون کون ہیں؟
کیا ُرولز کو حتمی شکل دینے سے پہلے اُن تمام اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کی گئی؟
کیا رُولز آئین کے آرٹیکل 19 اور 19 اے سے مطابقت رکھتے ہیں یا متصادم ہیں ؟
کیا سوشل میڈیا ُرولز کیمطابق کسی سرکاری ملازم کیخلاف بھی بات کرنا ممنوع قرار دیا گیا ہے؟
کیا سرکاری ملازم کیخلاف سوشل میڈیا پر بات کرنے والے کیخلاف کارروائی اختیارات کا غلط استعمال نہیں ہو گا؟

پی ٹی اے کے رُولز سے متعلق درخواستوں پر مزید سماعت پچیس جنوری تک ہو گی تاہم اُس سے پہلے عدالت نے پاکستان ٹیلی کمیونیکشن اتھارٹی کو تحریری جواب جمع کرانے کی ہدایت کی ہے

No comments

leave a comment